لیلة الجائزہ


عبادات کی راتوں میں ایک رات عید کی رات بھی ہے ۔۔  اور 

رمضان المبارک کے بعد جو عیدالفطر کی رات ہے وہ ( لیلتہ الجائزہ ) ہے ۔۔۔

مطلب کہ جس طرح

 مزدور کا پورا دن کام کا،اور شام کا وقت مزدوری لینے کا ہوتا ہے ۔۔ اسی طرح پورے رمضان المبارک کے بعد انعامات ، مغفرت ، اور دیگر معاملات وغیرہ کا جو وقت ہے وہ یہ عید کی رات "لیلة الجائزہ" ہے ۔۔


اللہ رب العزت سے مغفرت، دعائیں مانگنے کا وقت ہے اور ہم لوگ اپنے معاملات میں،بازاروں میں،اور دیگر مصروفیات میں وقت ضائع کر دیتے ہیں ۔۔۔


کوشش کی جائے کہ اپنے معاملات دن میں ہی سمیٹ لیں اور رات کو اللہ سے لینے والے ہو جائیں ۔۔


بے وقوف ہے وہ شخص جو پورا رمضان المبارک  عبادات سے اللہ کو راضی کرتا رہا اور بخشش کے وقت دنیاوی معاملات میں مشغول ہو گیا ۔۔


خود بھی کوشش کریں اور اپنے گھر والوں کو بھی تاکید کریں خاص طور پر خواتین کو ۔۔


رمضان المبارک  تو پھر بھی ضرور آئےگا(انشاءاللہ)  ليكن معلوم  نہیں ہم ہوں گے یا نہیں ۔۔۔


رمضان کا حق تو ادا نہیں کر سکتے لیکن کسی نہ کسی درجے کی کوشش تو کر ہی سکتے ہیں کیا پته اللہ اسی پر  هى بخش دے - آمین!!!


جزاکم اللہ خیراً۔

Share: